Saturday, February 24, 2024

بہار کابینہ کی توسیع پر سیاست تیز، کانگریس کا کہنا ہے: کابینہ کی توسیع میں بڑا دل نہیں دکھا رہی آر جے ڈی

(ترہت نیوزڈیسک)

  کانگریس بہار میں کابینہ کی توسیع کا مسلسل مطالبہ کر رہی ہے۔ اب اس معاملے میں سیاست تیز ہو گئی ہے۔ کانگریس کا کہنا ہے کہ بہار کابینہ کی توسیع میں راشٹریہ جنتا دل کو بڑا دل دکھانا چاہئے۔ کانگریس لیجسلیچر پارٹی کے لیڈر شکیل احمد نے کہا کہ ہم شروع سے ہی آر جے ڈی کے اتحادی ہیں۔ انہیں اس تاریخ کا فیصلہ کرنا ہے جس کے بعد وزیر اعلیٰ کابینہ میں توسیع کریں گے۔

شکیل احمد نے کہا کہ اس سلسلے میں تیجسوی یادو سے بات چیت ہوئی ہے۔ اس سلسلے میں ہم بار بار کیا بات کریں؟ آر جے ڈی ہماری حلیف پارٹی ہے اور اتحادی سے خیر سگالی کی توقع رکھتی ہے۔ اتحادیوں کے ساتھ کیا گیا معاہدہ ایک معاہدہ سمجھا جاتا ہے۔ آر جے ڈی نے جو معاہدہ ہماری اعلیٰ قیادت کے سامنے کیا ہے اس کا پاس رکھاجائے۔ کانگریس کی اعلیٰ قیادت کے سامنے ہر چیز پر بحث ہونے کے باوجود اگر اتحادی آر جے ڈی بڑا دل نہیں دکھا پا رہی ہے تو ہم کیا کہہ سکتے ہیں؟

کانگریس لیڈر شکیل احمد نے کہا کہ راشٹریہ جنتا دل ہمارا پرانا حلیف رہا ہے۔ ہمارا ان کے ساتھ اتحاد ہے۔ جب گرینڈ الائنس کی حکومت بنی تو بائیں بازو اور کانگریس پارٹی ان کے ساتھ آئی۔ ہمیں یہ امید تھی کیونکہ یہ ہمارا حق ہے۔ اور ہمیں حقوق کی بازیابی کی امید ہے۔ یہ ہماری کانگریس پارٹی کی اعلیٰ قیادت کے سامنے ہوا جس میں نتیش جی بھی شامل تھے۔ اس سب کے باوجود اگر ساتھی اپنا بڑا دل نہیں دکھا رہا تو اس کے بارے میں کیا کہوں؟

شکیل احمد نے کہا کہ کابینہ میں ابھی توسیع نہیں ہوئی۔ جبکہ میرا ماننا ہے کہ کابینہ میں توسیع ہونی چاہیے۔ اس پر عمل درآمد کیا جائے۔ ہمارا آر جے ڈی کے ساتھ اتحاد ہے اور ہمارا مطالبہ صرف ان سے ہے۔ اس نے بھی یہ بات مان لی۔ اگر آپ یہ مطالبہ نہیں مان رہے تو میں کیا کہوں؟ کانگریس پارٹی ادھر ادھر نہیں چھلانگ لگاتی ہے۔ بی جے پی سے لڑنا کانگریس کی مہم ہے۔ جن کے ساتھ ہم اتحادی ہیں ان سے کابینہ میں توسیع پر بات ہوئی ہے۔ اس حوالے سے اتحادیوں کے ساتھ معاہدہ ہو چکا ہے اور اس معاہدے پر عمل کیا جائے۔

تین ریاستوں میں ہوئے اسمبلی انتخابات میں شکست کے بعد کانگریس اور جے ڈی یو آمنے سامنے آگئی ہیں۔ شکیل احمد نے اشوک چودھری کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا کہ اشوک چودھری جو نتائج آئے ہیں اس پر جو کہہ رہے ہیں اس کا کوئی مطلب نہیں ہے۔ جب بولنے کی بات آتی ہے تو ہم بھی کچھ بھی کہہ سکتے ہیں لیکن بولنے کا ایک اصول ہوتا ہے۔ ہم نہیں مانتے کہ کانگریس کو تمام علاقائی پارٹیوں کے ساتھ مل کر لڑنا چاہیے۔ بے لگام بیانات دینے کا کیا فائدہ؟ ان کا اپنا سیاسی عکس کیا رہا ہے؟

اشوک چودھری ہمارے ساتھ تھے۔ اشوک چوہدری رائے دینے والے کون ہیں؟ رائے دینے کی جگہ ہے۔ شکیل احمد نے اشوک چوہدری سے کہا کہ آپ اتنی جلدی رائے دے رہے ہیں، آپ کو کس نے رائے دینے کو کہا ہے؟ آپ کی رائے کی پیروی کون کر رہا ہے؟ کیا نتیش جی آپ کی رائے مان رہے ہیں؟ کارکن اپنی اپنی شکل میں بولتے رہتے ہیں۔ یہ ہر جگہ کہتے ہیں، ان کے کہنے کا کیا مطلب ہے؟

اعلیٰ قیادت ہی حتمی اتھارٹی ہے۔ ہندوستانی اتحاد میں شامل تمام جماعتوں کی اعلیٰ قیادت نے اتحاد بنانے کا فیصلہ کیا تھا۔ تمام معاملات پر اتحاد کے اندر ہی بات کی جائے گی۔ اس کا جائزہ لیا جائے گا۔ اس کے علاوہ کوئی الگ تھلگ شخص کچھ کہے گا تو وہ اس کی ذاتی رائے ہوگی۔ راجستھان، مدھیہ پردیش اور چھتیس گڑھ میں راشٹریہ جنتا دل یا جنتا دل یونائیٹڈ کے ساتھ اتحاد ہوتا تو بہتر ہوتا۔

یہ فیصلہ بھی اتحاد کے اندر ہی ہونا تھا۔ اسی ڈی ایم کے ایم پی کے بیان پر انہوں نے کہا کہ کانگریس گائے کے پیشاب پر بیان کی حمایت نہیں کرتی ہے۔ ڈی ایم کے کا اپنا انداز ہے، وہ وہ باتیں بھی بولتے ہیں جو نہیں بولنی چاہیے۔ اس سے اتحاد پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔ ہم ایسے کسی بیان کی حمایت نہیں کرتے

Related Articles

Stay Connected

7,268FansLike
10FollowersFollow

Latest Articles