Saturday, February 24, 2024

‘‘جمہوریت کی بائی پاس سرجری ہوئی ہے’’ مہوا کی پارلیمانی رکنیت منسوخی پر ممتا بنرجی برہم

 (ترہت نیوزڈیسک)

پارلیمنٹ میں پیسے لینے اور سوال پوچھنے کے معاملے میں اخلاقیات کمیٹی کی سفارش کو قبول کرتے ہوئے لوک سبھا اسپیکر نے ٹی ایم سی رکن پارلیامنٹ مہوا موئترا کی پارلیمنٹ کی رکنیت منسوخ کر دی ہے۔ ایوان میں ووٹنگ کے بعد لوک سبھا نے مہوا کی رکنیت منسوخ کرنے کی تجویز پاس کر دی ہے۔ ترنمول کانگریس ایم پی کی رکنیت منسوخ ہونے کے بعد پارٹی سربراہ ممتا بنرجی کا ردعمل سامنے آیا ہے۔ مہوا کی رکنیت منسوخی پرمغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ نے کہا ہے کہ جمہوریت کی بائی پاس سرجری ہوئی ہے۔

دراصل، بی جے پی ایم پی نشی کانت دوبے نے ٹی ایم سی ایم پی مہوا موئترا پر الزام لگایا تھا کہ مہوا لوک سبھا میں بزنس مین درشن ہیرانندنی کی جانب سے سوال پوچھنے پر ان سے پیسے لیتی ہے۔ انہوں نے الزام لگایا تھا کہ مہوا نے جان بوجھ کر پیسے کے بدلے اڈانی گروپ اور پی ایم مودی کو نشانہ بنایا۔ بی جے پی ایم پی کی شکایت پر لوک سبھا کی اخلاقیات کمیٹی نے اس پورے معاملے کی جانچ کی۔ ایتھکس کمیٹی نے جمعہ کو سرمائی اجلاس کے دوران ایوان میں اپنی رپورٹ پیش کی۔

ایتھکس کمیٹی نے ٹی ایم سی ایم پی مہوا موئترا کے خلاف الزامات کو درست پایا اور لوک سبھا اسپیکر سے ان کی رکنیت منسوخ کرنے کی سفارش کی۔ ایوان میں ایتھکس کمیٹی کی رپورٹ پر بحث کی گئی۔ ایتھکس کمیٹی کی رپورٹ پر بحث کے بعد ووٹنگ کی گئی۔ ووٹنگ کے بعد لوک سبھا نے اخلاقیات کمیٹی کی سفارش کو قبول کر لیا اور مہوا موئترا کی پارلیمنٹ کی رکنیت منسوخ کر دی۔ اب اس پر سیاست شروع ہو گئی ہے۔

کرسیانگ، دارجلنگ میں، ٹی ایم سی سربراہ اور مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے کہا کہ یہ جمہوریت کا قتل اور جمہوریت کی بائی پاس سرجری ہے۔ ممتا نے کہا، “میں آپ کو بتا رہی ہوں کہ مہوا حالات کا شکار ہوگئی ہے۔ میں اس کی سخت مذمت کرتی ہوں۔ ہماری پارٹی مہوا کے ساتھ ہے۔ ہماری پارٹی ہندوستان کے اتحاد کے ساتھ مل کر لڑے گی۔ یہ جمہوریت کی بدقسمتی ہے۔ میں بی جے پی کی حمایت نہیں کرتی۔ مہوا کا رویہ دیکھ کر دکھ ہوتا ہے۔ مہوا کو اپنا موقف واضح کرنے کی اجازت نہیں دی گئی، یہ سراسر ناانصافی ہے۔ مہوا یہ لڑائی جیتے گی اور ہم اس کے ساتھ ہیں۔”

Related Articles

Stay Connected

7,268FansLike
10FollowersFollow

Latest Articles